Roznama Nasar

Khabroon ki Duniya

National Politics

بجلی کی لوڈ شیڈنگ پر اپوزیشن کا قومی اسمبلی میں احتجاج

             اسلام آباد 

اپوزیشن نے ملک بھر میں بالعموم اور کراچی میں بالخصوص بجلی کی لوڈ شیڈنگ پر قومی اسمبلی میں شدید احتجاج کیا ہے۔قومی اسمبلی کے اجلاس کے دوران کراچی میں غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ سے متعلق توجہ دلاوٴ نوٹس پر اظہار خیال کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے محمد کمال نے کہا کہ کراچی میں لوڈ شیڈنگ حکومت اور کے الیکٹرک کی ملی بھگت کا نتیجہ ہے، جب چیف جسٹس کسی بات کا نوٹس لیتے ہیں تو حکومت کے پیٹ میں درد ہوتا ہے، کے الیکٹرک کے معاملے پر حکومت اپنی ذمہ داری سے فرار اختیار نہ کرے،لوڈ شیڈنگ کے مسئلے پر توانائی کے وزیر کو معطل کیا جائے۔

متحدہ پاکستان کے عبدالوسیم نے کہا کہ کراچی والوں سے بجلی کا بل فرنس آئل کے حساب سے لیا جا رہا ہے اور بجلی گیس سے پیدا کی جا رہی ہے، تقسیم کار کمپنی کی انتظامیہ آئندہ نومبر تک کا منافع وصول کر چکی ہے اور جاتے جاتے بھی پاکستان کو لوٹنا چاہتی ہے۔

شیخ صلاح الدین نے کہا کہ کراچی کے عوام سے بلوں کی مد میں 60 ارب روپے زیادہ لیے گئے، اس کے باوجود کراچی میں گھنٹوں لوڈ شیڈنگ ہوتی ہے، سنا ہے اب کے الیکٹرک کو ایک چینی کمپنی کو بیچا جا رہا یے، کیا کے الیکٹرک سے کوئی پوچھنے والا نہیں ہے۔

نکتہ اعتراض پر وفاقی وزیر شیخ آفتاب نے اعتراف کیا کہ کراچی میں لوڈ شیڈنگ واقعی بہت زیادہ ہے، کے الیکٹرک معاہدے کی شرائط پوری نہیں کر رہا ، کے الیکٹرک کو اپنے معاملات درست کرنا ہوں گے، نیپرا نے تین رکنی کمیٹی کراچی بھجوائی ہے، جو 14 اپریل کو واپس آ کر رپورٹ دے گی، قائمہ کمیٹی برائے توانائی کا اجلاس کراچی میں رکھا جائے، ارکان پارلیمنٹ خود کراچی جا کر صورتحال کا جائزہ لیں۔

اس سے قبل بجلی چوری اور لوڈ شیڈنگ کے معاملے پر وفاقی وزیر اویس لغاری نے کہا کہ جہاں چوری نہیں ہوگی وہاں بجلی کی لوڈ شیڈنگ بھی نہیں ہوگی، میرے حلقے میں آٹھ گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ ہو رہی ہے، وزیراعظم،چیرمین سینیٹ یا میرے گھر کے فیڈر پر اگر بجلی چوری ہوگی تو لوڈ شیڈنگ ہوگی، ایک فیصد بجلی چوری سے12 ارب روپے کا نقصان ہوتا ہے، بجلی چوری سےاس وقت ملک میں 100 سے سوا سو ارب کا نقصان ہورہا ہے۔ ایوان بجلی چوری سےمتعلق قرارداد منظور کرے، جس میں کہا جائے کہ جتنی بجلی چوری ہو حکومت ٹیکس یا پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں اتنی بڑھائے، ایسی قرارداد آئے تو ہم ملک بھر میں بجلی کی لوڈ شیڈنگ ختم کردیتے ہیں۔

پارلیمانی سیکرٹری جاوید اخلاص نے کہا کہ گرمی میں بجلی کی لوڈشیڈنگ نقصان دہ ہے، کےالیکٹرک سوئی سدرن کے واجبات ادا کردے تو گیس دینے کو تیار ہیں، کے الیکٹرک اور سوئی سدرن کےمعاملے پر رپورٹ ایوان میں پیش کی جائے گی۔

قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ نے کہا کہ میں تلخی پیدا کرنا نہیں چاہتا، حکمرانوں کی دو دو گھنٹے کی تقریر سے فرق نہیں پڑے گا، تقریروں سے مسئلے حل نہیں ہوں گے، آج وہ حالات نہیں کہ چھوٹے صوبوں سے سوتیلا جیسا سلوک کریں، چوری کا ذکر کر کے لوڈ شیڈنگ کرنے سے حکومت کی جان نہیں چھوٹے گی، سندھ اور بلوچستان کو چور کہا جاتا ہے، لاہور میں 85 فیصد بجلی کے صارفین انڈسٹری اور کمرشل ہیں۔ رپورٹ آئی ہے کہ لاہور میں بجلی کی چوری پیسکو، حیسکو اور کیسکو سے زیادہ ہے، چوری کے لاسز 8 فیصد بھی نہیں ہیں یہ لاسز ٹیکنیکل ہیں، بلوچستان سندھ اور خیبر پختونخوا میں 50،50 سالہ پرانا اسٹرکچر ہے جس سے لاسز بڑھتے ہیں، ثابت کر سکتا ہوں کہ سندھ ،کے پی اور بلوچستان میں 16 سولہ گھنٹے لوڈ شیڈنگ ہو رہی ہے، 45 فیصد عوام کو دوزخ کی آگ میں ڈالا گیا ہے، 45 فیصد علاقوں میں لوڈ شیڈنگ ہو گی تو خاتمے کا دعوی کوئی نہیں مانے گا۔

Look for me to be on facebook by the end of the custom essay writing service https://nerdymates.com/ summer.

LEAVE A RESPONSE

Your email address will not be published. Required fields are marked *